Advertisement

Foot fungal infection in Urdu پَیروں کی پھپھوندی کی اِنفیکشن


Foot fungal infection in Urdu

پَیروں پر ہونے والی پھپھوندی کی اِنفیکشن کیلیئے اَنگریزی زبان میں Athlete’s foot یا Foot Ringworm کے الفاظ استعمال کیئے جاتے ہیں۔ طِبی اِصطلاح میں اسے Tinea Pedis کہا جاتا ہے۔ چونکہ بہت سے لوگوں میں یہ پاؤں کی خارش (paon mein kharish) کے طور پر ظاھر ھوتی ھے، اسلیئے لوگ اسے عام خارش ھی سمجھتے ھیں، یہاں تک کہ یہ زیادہ بگڑ جاتی ھے۔

Can foot fungal infection spread?

عام طور پر اِداروں میں رہنے والے لوگ جو نہانے دھونے کیلیئے دستیاب مُشترکہ سہولیات اِستعمال کرتے ہیں، اس اِنفکشن (Athlete's foot) سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ لیکن ایک عام گھریلو باتھ روم جِسے صرف اُس گھر کے افراد استعمال کرتے ہوں، بھی اِس انفکشن کے پھیلاؤ کا سبب بن سکتا ہے۔ سوئمِنگ پُول بھی کچھ ایسا ہی کردار ادا کرتے ہیں۔

پَیروں پر ہونے والی پھپھوندی کی اِنفکشن (Athlete's foot disease) بچوں کی نِسبت بڑوں میں زیادہ دیکھنے کو مِلتی ہے، مگر بچوں میں عموماً چھ سال کی عمر کے بعد ایسی اِنفکشن دیکھی جا سکتی ہے۔ تقریباً 20 فیصد مَردوں میں اور 5 فیصد خواتین میں ایسی اِنفکشن ھونے کے امکانات موجود ہوتے ہیں۔

Foot Fungal Infection (Athlete's Foot)

پھپھوندی قدرتی طور پر اندھیرے اور مرطُوب ماحول میں نشونما پاتی ہے۔ ایسا ماحول پھپھوندی کو بَند جُوتوں میں میسر آ جاتا ہے۔ اِسلیئے عام طور پر بَند جُوتے استعمال کرنے والے افراد میں اِس انفکشن (Athlete's foot) کا آغاز پاؤں کی چھوٹی اُنگلیوں کے درمیان سے ہوتا ہے۔ پہلے اِن انگلیوں کے درمیان کی جِلد پسینے سے گیلی ہوتی ہے اور پھر آپس میں رَگڑ کی وجہ سے جِلد کی سطح متاثر ہوتی ہے۔ ایسے ماحول میں وہاں موجود پھپھوندی اپنے قدم جمانے لگتی ہے۔ تاہم یہ ضروری نہیں کہ ایسی انفکشن صرف بَند جوتے پہننے والوں کو ہی ہو۔

پاؤں کو متاثر کرنے والی پھپھوندی (Foot fungus) کی مندرجہ ذیل اقسام زیادہ عام ہیں:

T.Rubrum

T. interdigitale

Epidermophyton floccosum

ایک ہی وقت میں ایک سے زیادہ اقسام کی پھپھوندیوں کی اِنفکشن بھی ممکن ہے۔



Foot fungal infection symptoms in Urdu

علامات

گرم موسم میں متاثرہ جگہ پر خارش ہوتی ہے اور عام طور پر پاؤں پر پھپھوندی کی اِنفکشن (Athlete's foot) لمبے عرصے تک چلتی ہے۔ پاؤں کی اُنگلیوں کے درمیان کی جگہ سُفیدی مائل رنگت اختیار کر لیتی ہے جہاں جلد گیلی محسوس ہوتی ہے اور بعض اوقات پَھٹ بھی جاتی ہے۔ بعض اوقات یہ پَھیل کر ساتھ والی اُنگلیوں اور پَیروں کے تلووں کی طرف چلی جاتی ہے۔ کچھ مریضوں میں پَیروں کی جِلد پر چِھلکے نظر آتے اور جِلد مَوٹی ہو جاتی ہے۔ ایسا عموماً پاؤں کی ایڑیوں اور تلووں پر ہوتا ہے۔ ایسے مریضوں میں پاؤں کے ناخن بھی اِس انفکشن سے متاثر ہو جاتے ہیں۔ کچھ مریضوں میں پاؤں پر پانی بَھرے چھالے بھی بن سکتے ہیں۔ چونکہ مریض خارش کی وجہ سے پاؤں کی جلد کو بار بار کُھجاتا ھے، اس لیئے بعض اوقات یہ انفیکشن ھاتھوں کی جلد کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیتی ھے۔

بچاؤ

متاثرہ افراد کو کوشش کرنی چاہیئے کہ اُن کے پاؤں سے یہ انفکشن دوسروں تک نہ پھیلے۔ متاثرہ افراد کو ننگے پیر باتھ روم یا سوئمنگ پُول کے فرش پر نہیں چلنا چاہیئے۔ باتھ روم اور سوئمنگ پُول وغیرہ کے فرش کو زیادہ سے زیادہ صاف اور خُشک رکھیں۔

Treatment

علاج

پَیروں پر ہونے والی پھپھوندی کی اِنفیکشن کا علاج آسانی سے ممکن ہے، مگر ایک دفعہ علاج کے بعد یہ انفکشن دوبارہ بھی ہو سکتی ہے۔ علاج کیلیئے جِلد پر لگانے والی اور کھانے والی ادویات استعمال کروائ جاتی ہیں۔ آپ کے علاج کیلیئے کون سی دوا مناسب ہو گی، اِس کا فیصلہ آپ کا معالج ہی بہتر طور پر کر سکتا ہے.

How long does it take to cure foot fungal infection (athlete's foot)?

علاج کا دورانیہ

علاج کا دورانیہ مختلف لوگوں میں مختلف ھوتا ھے۔ اگر بیماری کا علاج جلدی شروع کر لیا جائے تو علاج میں تھوڑا وقت درکار ھوتا ھے۔ لیکن اگر مرض بڑھ چکا ھو اور علاج دیر سے شروع کیا جائے تو علاج میں زیادہ وقت لگتا ھے۔ عام طور پر چار سے آٹھ ھفتوں میں علاج مکمل ھو جاتا ھے۔ شوگر کے مریضوں میں چونکہ بیماری کی شدت زیادہ ھوتی ھے، اس لیئے علاج کا دورانیہ زیادہ بھی ھو سکتا ھے۔ کچھ مریضوں میں پھپھوندی کی انفیکشن کے ساتھ ساتھ بیکٹیریا کی انفیکشن بھی ھو جاتی ھے، جس وجہ سے علاج مزید پیچیدہ ھو جاتا ھے۔ تاھم اس کا علاج بھی ممکن ھے اور جلد از جلد اپنے معالج سے رجوع کرنا بہتر ھے۔

یہ تحریر مفادِعامہ کیلیئے تیار کی گئی ہے۔ آپ اسے مصنف اور ویب سائیٹ کے نام سمیت اپنے احباب کیساتھ شیئر کر سکتے ہیں۔

جُملہ حقوق محفوظ ہیں۔

شیئر کر کے دوسروں کی آگاہی میں اپنا کردار ادا کریں۔


Skype

Clicking Subscribe button will subscribe you to our marketing campaigns as well.