Vitiligo in Urdu, Bars / Burs / Baras phulbehri ka ilaj پھلبہری یا برص کا علاج


Patches of Vitiligo on skin

مَچھلی کھانے کے بعد دودھ پینے سے پھلبہری کا مرض نہیں ہوتا!


Vitiligo in Urdu Language

پھلبہری یا برص کو انگریزی میں Vitiligo کہا جاتا ہے۔ اِنسانی جِلد میں موجود خاص قسم کے خُلیئے جِن کو میلانوسائٹ (Melanocytes) کہا جاتا ہے، جِلد میں رَنگت پیدا کرنے کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ یہ خلیئے ایک خاص قسم کا پِگمنٹ (Pigment) جِسے میلانین (Melanin) کہتے ہیں، تیار کرتے ہیں۔ مَیلانین ہی دراصل کِسی کی جِلد کی رَنگت کا تعین کرتا ہے۔ عام طور پر جِلد میں تقریباً 1000 سے 2000 میلانوسائٹ فِی مِلی مِیٹر پائے جاتے ہیں۔ تاہم جِلد کی رنگت کا اِنحصار میلانوسائٹ کی مِقدار پر نہیں، بلکہ اِن کی سرگرمی پر ہوتا ہے۔ پھلبہری کے مرض میں جِلد سے میلانوسائٹ خُلیوں کا بتدریج صفایا ہو جاتا ہے اور اِسی وجہ سے جِلد کی رنگت غائب ہو کر سفید رہ جاتی ہے۔

ایک اندازے کے مطابق دنیا کی آبادی کے تقریباً %0.5- %1 لوگ پھلبہری کے مرض میں مبتلا ہیں۔ یہ مرض کسی بھی عمر میں شروع ہو سکتا ہے لیکن زیادہ تر لوگوں میں اِس کا ظہور 20 سے 30 سال کی عمر میں ہوتا ہے۔ مَردوں اور عورتوں میں اِس کا تناسب تقریباً ایک جیسا ہے۔ پھلبہری اور تھائ رائیڈ غدود (Thyroid gland) کی بیماری کا تعلق بہت سے ماہرین تسلیم کرتے ہیں۔

پھلبہری ہونے کی وجوہات

جِلد سے میلانوسائٹ خلیوں کے ختم ہونے سے متعلق بہت سی مُختلف آرا پائ جاتی ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ انسانی جسم خود اپنے جِسم کے میلانوسائٹ خلیوں کے خلاف اینٹی باڈیز (Antibodies) بناتا ہے جو اِن خلیوں کو تباہ کر دیتی ہیں۔

جہاں تک پھلبہری کے خاندانی مرض ہونے کا تعلق ہے، تقریباً 30 فیصد پھلبہری کے مریضوں کے خاندانوں میں یہ مرض پایا جاتا ہے۔ اِس بُنیاد پر یہ کہا جا سکتا ہے کہ پھلبہری ہونے میں جینیاتی اثرات بھی اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔

علامات

پُھلبہری سے جِلد پر بننے والے سفید نشانوں کی ایک خاص بات یہ ہے کہ یہ عموماً اُن جگہوں پر بنتے ہیں جہاں جِلد کو چَوٹ پہنچتی ہو۔ یہاں چَوٹ سے مُراد رَگڑ، دباؤ، خارش کرنا، جَلنا یا دُھوپ سے متاثر ہونا وغیرہ لیا جا سکتا ہے۔ جِسم کے وہ مقامات جہاں عموماً چوٹ پہنچتی ہے ، اُن میں ہاتھ، اُنگلیاں، کولہے، پاؤں، کُہنیاں، گُھٹنے اور ٹخنے شامل ہیں، اور اِنہی مقامات پر پھلبہری کے نِشانات زیادہ تر پائے جاتے ہیں۔ پھلبہری کے نِشان سُورج کی روشنی سے متاثر ہو کر جَلن کا شکار ہو سکتے ہیں اور بعض اوقات اِن میں خارش بھی ہو سکتی ہے۔ کُچھ لوگوں کی مُکمل جِلد پھلبہری کا شکار ہو جاتی ہے؛ تاہم زیادہ تر لوگوں میں یہ جِسم کے کچھ حصوں تک محدود رہتی ہے۔ پھلبہری سے متاثرہ جِلد پر موجود بال اپنی رنگت کھو کر سفید ہو سکتے ہیں۔ زیادہ تر مریض پھلبہری کے علاج کیلیئے اِس وجہ سے رجوع کرتے ہیں کیونکہ یہ دیکھنے میں بھلی نہیں لگتی۔

پھلبہری اپنے آغاز کے بعد آہستہ آہستہ بڑھتی ہے، لیکن کچھ لوگوں میں یہ کچھ مہینے تیزی سے بڑھنے کے بعد کئی سالوں کیلیئے بڑھنا رُک جاتی ہے۔ بعض اوقات جِلد کے وہ حِصے جِن پر سُورج کی روشنی پڑتی ہے، وہاں خود بخود بہتری آنے لگتی ہے۔

علاج

پھلبہری کے علاج کیلیئے ضروری ہے کہ آپ جِلد کے کِسی ماھر ڈاکٹر سے رجوع کریں اور اُس کی نگرانی میں اپنا علاج کروائیں۔ پھلبہری کے علاج کیلیئے کھانے اور جِلد پرلگانے والی ادویات کا استعمال کروایا جاتا ہے۔ جِلد پر لگانے والے سٹیرائڈ کِسی حد تک بہتری لا سکتے ہیں، تاہم اِن کے مسلسل استعمال سے اِن کے ذیلی اثرات نظر آنے لگتے ہیں۔ اِس لیئے انہیں مسلسل استعمال کی بجائے وقفے وقفے سے اِستعمال کرنا چاہیئے۔ حال ہی میں کیلسینیورِن اِنہیبیٹرز(Calcineurin inhibitors) کے اِستعمال کے فوائد سامنے آئے ہیں اور اِن پر مزید تحقیق جاری ہے۔

سورالن (Psoralen) ادویات کا استعمال بھی پھلبہری کے علاج میں کسی حد تک مدد فراحم کرتا ہے۔ اِس کے علاوہ اَلٹرا وائلِٹ شُعاعوں سے کی جانے والی UVB Therapy بھی کچھ لوگوں کو فائدہ پہنچاتی ہے۔

سرجری کے ذریعے سکن گرافٹنگ (Grafting) کو بھی پھلبہری کے علاج میں اِستعمال کیا جاتا ہے۔

اُن مریضوں میں جِن کی زیادہ تر جِلد پھلبہری سے متاثر ہو چکی ہو، بقیہ جِلد کو ڈِی-پِگمنٹنگ کے ذریعے سفید کیا جا سکتا ہے، تاکہ پوری جِلد ایک جیسی دکھائ دے۔

پھلبہری کے علاج کے نتائج غیر متوقع ہوتے ہیں۔ اُنگلیوں اور کانوں پر پڑنے والے پھلبہری کے نِشان زیادہ آسانی سے ٹھیک نہیں ہوتے۔ ایسے مریضوں کو یہ نصیحت کی جاتی ہے کہ وہ سَن بلاک کا استعمال کریں اور کاسمیٹک کریموں وغیرہ کے اِستعمال سے اپنی جِلد کے نشانوں کو چھپائیں۔

یہ تحریر مفادِعامہ کیلیئے تیار کی گئی ہے۔ آپ اسے مصنف اور ویب سائیٹ کے نام سمیت اپنے احباب کیساتھ شیئر کر سکتے ہیں۔

جُملہ حقوق محفوظ ہیں۔

Skype

Clicking Subscribe button will subscribe you to our marketing campaigns as well.