Fusidic acid in Urdu فیوسیڈک ایسڈ کیا ھے اور کیسے کام کرتا ھے؟


پاکستان میں فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) کے مندرجہ ذیل برانڈ دستیاب ھیں:

FOSIDEC, FUCIDIN, FUSIDAY, FUSIDERM, LUCIREX, BIO-PORENA, CIDIC, CURODERM, DERMAFUSE, DERMODIC, DERMY, FUDELUX, DUZEN, FUSKIN, FUSIFIT, FUSIMIN, FUSIPAN, FUDIC, FUSAC, FUSIL B, FUSIMED, FUSIWAY, FYDOL, FUSIDIC ACID USES, GENIDIC, HOFID, INFACID, MELAS, NOVISKIN, PATHODERM, PHUSILAN, PLISID, SIDIC, SECODIC, SIDIK, TICA, UDIC, USIDIN, ZUDIC.

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) ایک اینٹی بائیوٹک دوا کے طور پر جانا جاتا ھے اور یہ 1960 کی دہائ میں دریافت کیا گیا۔ پہلی دفعہ اِسے ایک بیکٹیریا Fusidium coccineum ، سے اخذ کیا گیا۔ یہ ایک سٹیرائیڈ نُما اینٹی بائیوٹک (steroid-like antibiotic) ھے جسے fusidanes کی کلاس میں شمار کیا جاتا ھے۔ شروع شروع میں فیوسیڈک ایسڈ جِلد، ھڈیوں اور جوڑوں کی انفیکشن کے علاج کیلیئے استعمال کیا جانے لگا، مگر پھر اس کے خلاف بیکٹیریا میں مدافعت پیدا ھونے کے خدشے کے پیشِ نظر، اسے ایک دوسری دوا Rifampin کے ساتھ استعمال کیا جانے لگا۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ فیوسیڈک ایسڈ کی گولی اور ٹیکے کا استعمال نہایت کم ھو گیا ھے اور اب زیادہ تر اِسے کریم یا آئنٹمنٹ کی شکل میں استعمال کیا جاتا ھے۔

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) بیکٹیریا کے خُلیہ میں پروٹین بننے کے عمل میں رکاوٹ ڈالتا ھے جس وجہ سے بیکٹیریا اپنی ضرورت کی پروٹین نہیں بنا پاتا۔ نتیجتاً اُس کی ھلاکت ممکن ھو جاتی ھے۔

فیوسیڈک ایسڈ کا دائرہ اثر بہت محدود ھے اور یہ زیادہ تر گرام پازیٹو بیکٹیریا کے خلاف فعال سمجھا جاتا ھے۔ فیوسیڈک ایسڈ مندرجہ ذیل بیکٹیریا کے خلاف نہایت کارگر ھے:

- Staphylococcus aureus

- S. epidermidis

- Clostridium spp

- Corynebacteria

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) گرام نیگیٹو بیکٹیریا کے خلاف بہت کم اثر رکھتا ھے۔ اس کی وجہ یہ ھے کہ اس کا مالیکیول نِسبتاً بڑا اور lipophilic ھوتا ھے جو اِن بیکٹیریا میں داخلے کیلیئے کارآمد نہیں ھوتا۔

فیوسیڈک ایسڈ anaerobes کے خلاف کسی حد تک کارآمد سمجھا جاتا ھے۔

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) کریم یا آئنٹمنٹ

فیوسیڈک ایسڈ کریم یا آئنٹمنٹ کو متاثرہ جگہ لگایا جاتا ھے اور اسے جلد کی جن کیفیات میں استعمال کیا جاتا ھے، اُن میں سے چند مندرجہ ذیل ھیں:

- Impetigo (ایک متعدی مرض جس میں چہرے پر شہد کے رنگ کے چھالے نکلتے ھیں، جن سے پانی رس رس کر منہ پر جم جاتا ھے)

- Sycosis barbae (داڑھی کے بالوں کی جڑھوں کی سوزش)

- Folliculitis (بالوں کی جڑھ کی سوزش)

- Erythrasma

- Paronychia (ناخنوں کے آس پاس کی جِلد کی سوزش اور سوجن)

- Cuts (جلد پر ھونے والے زخم وغیرہ)

- Acne (کیل، مہاسے، پِمپل، چہرے کے دانے)

- Stitches (جہاں ٹانکے لگے ھوں اور انفیکشن سے بچنا مقصود ھو)

کھُلے ھوئے زخم یا پھٹی ھوئ جِلد پر فیوسیڈک ایسڈ کا اِستعمال مناسب نہیں سمجھا جاتا۔

حاملہ خواتین میں اور دودھ پلانے والی ماؤں میں فیوسیڈک ایسڈ کریم یا آئنٹمنٹ کا اِستعمال محفوظ خیال کیا جاتا ھے۔

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) کی گولی یا ٹیکہ کا استعمال

فیوسیڈک ایسڈ مُنہ کے ذریعے جسم میں داخل ھونے کے بعد بہت آسانی سے جسم میں جذب ھوتا ھے اور یہ کافی زیادہ دیر تک خون میں اپنی سطح برقرار رکھتا ھے۔ تقریباً 10 سے 14 گھنٹوں کے بعد اس کی آدھی مقدار جسم میں باقی رہ جاتی ھے۔ اس کی زیادہ مقدار ھَڈیوں، جوڑوں، قلب اور پھیپھڑوں پر اثرانداز ھوتی ھے۔ جسم میں داخل ھونے والی دوا کی نہایت کم مقدار گُردوں کے ذریعے جسم سے خارج ھوتی ھے۔ دوا کی زیادہ تر مقدار جگر میں ٹوٹ پُھوٹ کا شکار ھو کر پِتے کی رطوبت کے ذریعے خارج ھوتی ھے۔

فیوسیڈک ایسڈ (fusidic acid) کریم یا آئنٹمنٹ کے استعمال سے مندرجہ ذیل سائیڈ افیکٹ سامنے آ سکتے ھیں:

- جلد کا سرخ ھونا

- خارش

- فیوسیڈک ایسڈ سے حساسیت کی صورت میں سُرخی، خارش یا چھالے پڑنا

- جِلد پر جلن یا درد ھونا

- جِلد کی سوزش ھونا

- آنکھ کے سفید حصے کی سوزش (Conjunctivitis)


Skype

Clicking Subscribe button will subscribe you to our marketing campaigns as well.